امام کاظم

حضرت موسی بن جعفر عليہ السلام "امام کاظم" کے نام سے معروف ہیں۔ شیعیان اہل بیت(ع) کے ساتویں امام ہیں جو سنہ 128 ہجری کو مکہ اور مدینہ کے درمیان واقع بستی ابواء[1] میں پیدا ہوئے۔

امام کاظم علیہ السلام اپنے والد امام جعفر صادق علیہ السلام کی شہادت کے بعد مقام امامت پر فائز ہوئے اور آپکی امامت کا دورانیہ 35 سال پر محیط ہے جو 148 ہجری سے لے کر سنہ 183 ہجری تک رہا ۔حضرت امام کاظم کی زندگی کا کچھ حصہ زندان میں گزرا اور رجب المرجب رجب المرجب سنہ 183 میں (ہارون عباسی کے حکم پر) سندی بن شاہک کے زندان میں مسموم کئے گئے اور آپ نے قیدخانے میں شہادت پائی۔ [2]

بعض خلفائے عباسی، یہودی اور مسیحی علما سے آپکی گفتگوئیں اور مناظرے تاریخی اور حدیثی کتب میں مذکور ہیں ۔مسند امام موسی کاظم میں 3000 ہزار سے زیادہ احادیث آپ سے مروی ہیں جن میں سے بعض روایات کے راوی اصحاب اجماع ہیں ۔ آپ نے اپنے دور امامت میں وکالت کو توسع دیتے ہوئے مختلف مناطق میں وکیلوں کو متعین کیا ۔آپ نے خلفائے بنی عباس عباس کے مقابلے میں تقیّے کی روش کو اختیار کیا اور اپنے مؤمنین کو بھی اسی کی تاکید کی ۔شاید یہی وجہ ہے کہ آپ کے دور امامت میں علویوں کی طرف سے کسی قیام کی خبر منقول نہیں ہوئی ہے ۔لیکن اسکے باوجود خلفا اور دوسروں کے سامنے اپنی گفتگو میں ان کی خلافت کے عدم جواز کو بیان کرتے ۔

شیعہ اور سنی منابع میں آپ کے علم، عبادت، بردباری اور سخاوت کی تعریف مذکور ہے اور وہ آپ کو کاظم اور  عبد صالح کے لقب سے یاد کرتے ہیں ۔ بزرگان اہل‌ سنت ایک شیعہ عالم دین کے حوالے سے آپ کے احترام کے قائل تھے اور وہ شیعوں کی مانند آپکی زیارت کیلئے سفر کرتے ۔آپ کا مرقد مبارک عراق کے شہر بغداد کے پاس کاظمین میں موجود ہے ۔

اسماعیلیہ، فطحیہ اور ناؤوسیہ فرقے آپکی امامت کے زمانے میں یا آپ کی شہادت کے بعد معرض وجود میں آئے ۔

کہتے ہیں کہ امام کاظم(ع) کی ۳۷ اولادیں تھیں . امام رضا(ع)، احمد ، حمزه اور محمد معروف‌ ترین بیٹے اور حضرت فاطمہ معصومہ(س) معروف‌ ترین بیٹی ہیں۔

نسب، کنیت ، لقب

نسب:موسی بن جعفر بن محمد بن علی زین العابدین بن حسین بن علی بن ابی طالب۔

کنیت:ابو ابراہیم، ابو الحسن اور ابوعلی۔

لقب: آپ کو دوسروں کے سامنے غصہ پی جانے کی بنا پر کاظم[3][4] اور کثرتِ عبادت کی وجہ سے عبد صالحکا لقب دیا گیا.[5] باب الحوائج نیزآپ کے القاب میں سے ہے۔ [6][7][8][9] اور مدینے کے لوگ انہیں زین المجتہدین کے لقب سے یاد کرتے .[10]

اہل سنت کا مشہور عالم ابن حجر ہیتمی (متوفیٰ 974ہجری) رقمطراز ہے: آپ بہت زیادہ درگذر کرنے اور بردباری کی وجہ سے "کاظم" کہلائے اور عراقیوں کے نزدیک باب الحوائج عند اللہ (یعنی اللہ کے نزدیک حاجات کی برآوری کرنے والے) کے عنوان سے مشہور تھے۔ اور اپنے زمانے کی عابدترین، دانا ترین و عالم ترین اور انتہائی فیاض شخصیت کے مالک تھے۔[11]

انگشتریوں کے نقش

امام موسی کاظم علیہ السلام کی انگشتریوں کے لئے دو نقش:الْمُلْكُُ‏ للہِ وَحْدَه[12] اور حَسبِيَ اللهُ منقول ہیں۔[13]

زندگینامہ

ولادت

امام کاظم(ع) اتوار 7 صفر سنہ 128 یا 129[14] ہجری کو حضرت امام صادق کی اپنی زوجہ کے ہمراہ حج سے واپسی پر مکہ اور مدینہ کے درمیان ابواء کے مقام پر پیدا ہوئے تاہم بعض مؤرخین کا کہنا ہے کہ آپ(ع) مدینہ میں پیدا ہوئے ہیں۔[15]

در محاسن میں برقی کی روایت کے مطابق ، امام صادق(ع) نے اس نومولود کی ولادت کے بعد تین دن تک عمومی ضیافت کا بندوبست کیا۔[16]

روز ولادت میں اختلاف ہے بعض نے مہینے اور دن کے بغیر صرف مقام ولادت ذکر کیا ہے [17][18][19]بعض نے کہا ہے : کسی نے ولادت کا مہینہ ذکر نہیں کیا ہے بلکہ صرف سال ذکر کیا ہے .[20][21] لیکن یہ بات درست نہیں ہے کیونکہ طبری نے انکی ولادت ماه ذی الحجہ[22][23] اور بعض جیسے طبرسی 7ماہ ماه صفر سمجھتے ہیں.[24]

امام موسی کاظم(ع) 25 رجب سنہ 183 ہجری کو بغداد میں شہید ہوئے۔[25]

آپ(ع) متوسط القامہ، نورانی چہرے کے مالک تھے۔ آپ کے چہرے کی رنگت گندمی ، ڈاڑھی گھنی اور سیاہ تھی۔[26] شیخ مفید لکھتے ہیں: آپ(ع) اپنے زمانے کی عابد ترین، فقیہ ترین، سخی ترین اور بزرگوار ترین شخصیت سمجھے جاتے تھے۔[27]

 

موسی بن جعفر(ع) کی ولادت امویوں سے عباسیوں کی طرف حکومت کے منتقل ہوتے ہوئی .آپ کا سن چار سال تھا کہ پہلا عباسی خلیفہ مسند حکومت پر بیٹھا ۔ منابع تاریخی میں امام کاظم کی زندگی کے امامت سے پہلے دور کے متعلق کوئی معلومات نہیں ہے البتہ بچپنے میں ابوحنیفہ[28] [29] اور د دوسرے ادیان کے علما سے مدینہ میں ہونے والی چند گفتگوئیں مذکور ہیں۔ [30] [31]

مناقب کی روایت کے مطابق ایک مرتبہ امام ایک اجنبی شخص کی حیثیت سے شام کے ایک دیہات میں وارد ہوئے تو ایک راہب سے گفتگو ہوئی جس کے نتیجے میں راہب ، اسکی بیوی اور اطرافیوں بھی مسلمان ہوئے ۔ [32] اسی طرح حج اور عمرے کے بارے میں کچھ روایات مذکور ہیں ۔ [33] چند مرتبہ خلفائے عباسی کی طرف سے بغداد امام احضار ہوئے .اسکے علاوہ امام کی ساری زندگی مدینہ میں رہے ۔

ازواج اور اولاد

آپ کی ازواج کی تعداد واضح نہیں ہے لیکن منقول ہے کہ ان میں سے زیادہ تر کنیزیں ہیں جنہیں آپ خرید لیتے تھے اور پھر انہيں آزاد کر کے ان سے نکاح کرلیتے تھے۔ ان میں سب سے پہلی خاتون امام رضا(ع) کی والدہ نجمہ خاتون ہیں۔[34] آپ کے فرزندوں کی تعداد کے بارے میں تاریخی روایات مختلف ہیں۔ شیخ مفید کا کہنا ہے کہ امام کاظم(ع) کی 37 اولادیں ہیں جن میں 18 بیٹے اور 19 بیٹیاں شامل ہیں:[35]

    علی بن موسى الرضا عليہما السلام

    إبراہيم

    عباس

    قاسم، ان سب کی والدہ ام ولد (نجمہ خاتون) تھیں۔

    إسمعيل

    جعفر

    ہارون

    حسين، ان کی والدہ ام ولد تھیں۔

    أحمد

    محمد

    حمزة، جن کی والدہ ام ولد تھیں۔

    عبد اللہ

    إسحق

    عبيد اللہ

    زيد

    حسن

    فضل

    سليمان، ان کی والدہ ام ولد تھیں۔

    فاطمۂ كبرى

    فاطمۂ صغرى

    رقيہ

    حكيمہ

    أم أبيہا

    رقيہ صغرى

    كلثوم

    أم جعفر

    لبابہ

    زينب

    خديجہ

    عليّہ

    آمنہ

    حسنہ

    بريہہ

    عائشہ

    أم سلمہ

    ميمونہ

    أم كلثوم، ان کی مائیں بھی ام ولد ہیں۔

    علی بن موسی(ع)، اعظم و افضل اولاد ہیں جن کا مدفن مشہد مقدس میں ہے۔

    احمد بن موسی (ع) معروف بہ شاہ چراغ کا مدفن شیراز میں ہے۔

    حسین بن موسی(ع) جو شیراز میں مدفون ہیں۔

    محمدبن موسی(ع) جو شیراز میں مدفون ہیں۔

    حمزہ بن موسی(ع) جو تہران کے نواحی شہر "رے" میں مدفون ہیں۔

    فضل بن موسی(ع) جو ساوہ کے نواحی گاؤں آوه میں مدفون ہیں۔

    سلیمان بن موسی(ع) جو ساوہ سے 20 کلومیٹر کے فاصلے پر "آوہ" نامی بستی میں مدفون ہیں۔

    ہارون بن موسی(ع) جو ساوہ میں مدفون ہیں۔

    اسحق بن موسی(ع) جو ساوہ میں مدفون ہیں۔

    عبداللہ بن موسی(ع) جو ساوہ شہر کے نواحی سب تحصیل قرہ چای کے گاؤں اوجان میں مدفون ہیں۔

    قاسم بن موسی(ع) جو عراقی صوبہ بابل کے شہر حِلّہ میں مدفون ہیں۔

    آپ کی مشہور ترین بیٹی فاطمۂ معصومہ ہیں جو مقدس شہر قم میں مدفون ہیں۔

ایران اور دنیا کے دیگر کئی ممالک میں امام موسی کاظم(ع) کی اولاد موسوی سادات موجود ہے جبکہ آپ کے قرزند امام علی بن موسی رضا کی اولاد رضوی سادات کے نام سے مشہور ہے۔

اسیری اور قیدخانہ

امام کاظم(ع) کی گرفتاری کے اسباب میں مختلف قسم کے اقوال نقل ہوئے ہیں جن سے اہل تشیع کے درمیان امام(ع) کے مرتبے اور مقام و منزلت کی عکاسی ہوتی ہے۔ چنانچہ مؤرخین نے بیان کیا ہے کہ عباسی دربار کے وزیر یحیی برمکی یا پھر امام(ع) کے ایک بھائی نے عباسی بادشاہ ہارون عباسی کے پاس چغل خوری اور بہتان تراشی کی تھی۔ ہارون نے امام(ع) کو دو مرتبہ قید کردیا لیکن تاریخ پہلی مدتِ قید کے بارے میں خاموش ہے جبکہ دوسری مدتِ قید سنہ 179 سے 183ہجری تک ثبت کی گئی ہے جو امام(ع) کی شہادت پر تمام ہوئی۔[36]

ہارون نے سنہ 179 میں امام(ع) کو مدینہ سے گرفتار کیا۔ امام(ع) 7 ذوالحجۃالحرام کو بصرہ میں عیسی بن جعفر کے قیدخانے میں قید کئے گئے؛ جہاں سے آپ کو بغداد میں فضل بن ربیع کی زندان میں منتقل کیا گیا۔ فضل بن یحیی کی زندان اور سندی بن شاہک کی زندان وہ قید خانے تھے جن میں امام(ع) نے اپنی عمر کے آخری لمحات تک اسیری کی زندگی گذاری۔[37]

شہادت کی کیفیت

امام کاظم(ع) 25 رجب سنہ 183ہجری کو بغداد میں واقع سندی بن شاہک کی زندان میں شہید کیا گیا۔ آپ کی شہادت کے بعد سندی نے حکم دیا کہ آپ کا جسم بے جان بغداد کے پل پر رکھ دیا جائے اور اعلان کیا جائے کہ آپ طبعی موت پر دنیا سے رخصت ہوئے ہیں! [38]

آپ کی شہادت کے متعلق بیشتر تاریخ نگار آپ کی مسمومیت کے قائل ہوئے ہیں اور یحیی بن خالد اور سندی بن شاہک کو آپ کے قاتلوں کے طور پر جانے گئے ہیں۔[39] جبکہ بعض مؤرخین کا کہنا ہے کہ آپ کو ایک بچھونے میں لپیٹ دیا گیا جس کی وجہ سے آپ کا دم گھٹ گیا اور شہید ہوگئے ہیں۔[40] اور بعض دیگر نے لکھا ہے کہ ہارون کے حکم پر پگھلا ہوا سیسہ امام(ع) کے گلے میں انڈیل دیا گیا۔[41] تاہم مشہور ترین قول ـ جو تواتر کی حد تک پہنچ گیا ہے ـ یہی ہے کہ یحیی برمکی ہارون کے حکم پر سندی بن شاہک کے ذریعے زہر آلود کھجوروں کے ذریعے امام کو شہید کروایا۔ روایت ہے کہ ہارون نے شیعیان آل رسول(ص) کا مرکز متزلزل کرنے، اپنے اقتدار کو طول دینے اور حکومت کے استحکام کی غرض سے آپ کی شہادت کا حکم جاری کیا اور یہودی سندی بن شاہک نے 10 زہریلی کھجوریں امام(ع) کو کھلا دیں اور کہا مزيد تناول کریں تو امام(ع) نے فرمایا: حَسبُکَ قَد بَلَغتَ ما یَحتاجُ اِلیهِ فِیما اُمِرتَ بِهِ۔ تیرے لئے یہی کافی ہے اور تجھے جو کام سونپا گیا تھا اس میں تو اپنے مقصد تک پہنچ گیا"۔

اس کے بعد سندی نے چند قاضیوں اور بظاہر عادل افراد کو حاضر کیا تاکہ ان سے گواہی دلوا سکے کہ امام بالکل صحیح و سالم ہیں۔ امام کاظم(ع) نے سندی کی سازش کو بھانپتے ہوئے درباری گواہوں سے کہا: گواہی دو کہ مجھے تین دن قبل مسموم کیا گیا ہے اور اگر چہ میں بظاہر تندرست ہوں مگر بہت جلد اس دنیا سے رخصت ہوجاؤں گا؛ راوی کہتا ہے کہ امام(ع) اسی دن اس دنیا سے رخصت ہوئے۔ [42]

مدفن اور زیارت کا ثواب

شیعیان آل محمد(ص) کو امام(ع) کی شہادت کی اطلاع ملی تو انھوں نے آپ کا جنازہ اٹھایا اور عقیدت و احترام کے ساتھ قبرستان قریش میں سپرد خاک کیا۔ جہاں آپ کا حرم مطہر آج بھی زیارتگاہ خاص و عام ہے۔

امام رضا علیہ السلام نے امام کاظم(ع) کی زیارت کی فضیلت بیان کرتے ہوئے فرمایا: من زار قبر أبي ببغداد كمن زار قبر رسول الله (صلى الله عليه وآله) وقبر أمير المؤمنين (صل) إلا أن لرسول الله ولأمير المؤمنين صلوات الله عليهما فضلهما"؛(ترجمہ: جس نے بغداد میں میرے والد امام کاظم(ع) کی قبر کی زیارت کی گویا اس نے رسول خدا(ص) اور امیر المؤمنین(ع) کی زيارت کی ہے۔ سوا اس کے کہ رسول خدا(ص) اور امیرالمؤمنین(ع) کی اپنی خاص فضیلت ہے)۔ نیز حسن بن الوشاء کہتے ہیں: "سألته عن زيارة قبر أبي الحسن (عليه السلام) مثل قبر الحسين (عليه السلام)؟ قال: نعم"۔(ترجمہ: میں نے امام رضا(ع) سے پوچھا: کیا امام ابوالحسن (امام کاظم) کی قبر کی زيارت کا ثواب زیارتِ قبرِ حسین(ع) کے برابر ہے؟ فرمایا: ہاں)۔[43]

خطیب بغدادی کا کلام

 

خطیب بغدادی نے اپنے وقت کے حنبلی شیخ، حسن بن ابراہیم ابو علی خلال سے نقل کیا ہے: مجھے کبھی بھی کوئی دشوار مسئلہ پیش نہیں آیا مگر یہ کہ میں قبرِ موسی بن جعفر پر حاضر ہوا ہوں اور ان سے متوسل ہوا ہوں اور وہ مسئلہ خداوند متعال نے میرے لئے آسان بنا دیا ہے۔ [44]

امامت

آپ نے اپنے والد ماجد امام صادق(ع) کی شہادت کے بعد سنہ 148ہجری میں امامت کا عہدہ سنبھالا اور آپ کی امامت 35 برس کے عرصے پر محیط ہے۔ اگرچہ امام صادق(ع) نے عباسی خلیفہ منصور عباسی کی سازش ناکام بنانے کے لئے پانچ افراد کی جانشینی کا اعلان کیا تھا جن میں منصور عباسی بھی شامل تھا تاہم حقیقی شیعیان آل رسول(ص) نے آپ کی امامت کو تسلیم کیا۔[45]

دلائل امامت

بعض فقہا اور امام صادق(ع) کے با اعتماد اصحاب نے امام موسی کاظم(ع) کی امامت کے اعلان و تائید کے سلسلے میں امام صادق(ع) کے اقوال نقل کئے ہیں جن میں مفضل بن عمر جعفی، معاذ بن کثیر، عبدالرحمن بن حجاج، فیض بن مختار، یعقوب سراج، سلیمان بن خالد اور صفوان جمّال شامل ہیں۔

ایک روایت میں ہے کہ امام صادق(ع) نے فرمایا: وهب الله لي غلاما، وهو خير من برأ الله (ترجمہ: خدواند متعال نے مجھے ایسا فرزند عطا کیا جو اس کی مخلوقات میں سب سے بہتر ہے)۔ [46]امام صادق(ع) نے ایک دوسری حدیث کے ضمن میں فرمایا: وَدِدْتُ‏ أَنْ‏ لَيْسَ‏ لِي‏ وَلَدٌ غَيْرُهُ حَتَّى لَا يَشْرَكَهُ فِي حُبِّي لَهُ أَحَدٌ (ترجمہ: میری پسند یہ تھی کہ اس (موسی کاظم) کے سوا میرا کوئی فرزند نہ ہوتا تاکہ کوئی اس سے میری محبت میں شریک نہ ہوتا)۔ [47]

امام صادق) کے فرزند علی بن جعفر نقل کرتے ہیں کہ میرے والد نے اپنے خواص اصحاب سے اپنے بیٹے موسی کے متعلق یوں سفارش کی :

 فَإِنَّهُ أَفْضَلُ وُلْدِی وَ مَنْ أُخَلِّفُ مِنْ بَعْدِی وَ هُوَ الْقَائِمُ مَقَامِی وَ الْحُجَّةُ لِلہِ تَعَالَى عَلَى كَافَّةِ خَلْقِهِ مِنْ بَعْدِی‏[48] وہ میرا افضل ترین فرزند ہے اور یہ وہ ہے جو میرے بعد میری جگہ لے گا اور میرے بعد مخلوق خدا پر اللہ کی حجت ہے ۔

علاوہ ازیں رسول اللہ(ص) سے احادیث منقول ہیں جن میں 12 ائمۂ شیعہ کے اسمائے گرامی ذکر ہوئے ہیں اور یہ احادیث امام موسی بن جعفر الکاظم علیہ السلام سمیت تمام آئمہ(ع) کی امامت ، خلافت اور ولایت کی تائید کرتی ہیں۔[49]

ہم عصر خلفاء

امام کاظم(ع) کے دوران خلافت میں درج ذیل عباسی خلفا رہے:

    منصور دوانیقی ( 136سے 158 تک)

    مہدی (158 سے 169 تک)

    ہادی (169 سے 170 تک)

    ہارون الرشید (170 سے 193 تک)[50]

شیعہ گروہ بندی

پیروان اہل بیت(ع) میں سے بعض شیعہ امام صادق(ع) کی حیات میں ہی آپ کے بڑے بیٹے اسمعیل بن جعفر کی امامت کے قائل تھے۔ اسمعیل کا انتقال ہوا تو ان کی موت کا یقین نہین کیا اور انہیں پھر بھی امام سمجھتے رہے۔ امام صادق(ع) کی شہادت کے بعد ان میں سے بعض نے اسمعیل کی حیات سے مایوس ہوکر ان کے بیٹے محمد بن اسمعیل کو امام سمجھا اور اسماعیلیہ کہلائے۔ بعض دوسرے امام صادق(ع) کی شہادت کے بعد عبداللہ افطح کی طرف متوجہ ہوئے اور اس کی پیروی کی اور فطحیہ کہلائے۔ امام موسی کاظم(ع) کے زمانے کے دوسرے فرقوں میں ناووس نامی شخص کے پیروکاروں کا فرقہ ناووسیہ اور اور آپ کے بھائی محمد بن جعفر دیباج کی امامت کا قائل فرقہ شامل ہیں۔

امام موسی کاظم(ع) کی شہادت کے بعد بھی امام رضا(ع) کی امامت پر اعتقاد نہ رکھنے والے افراد نے امام موسی کاظم(ع) کی امامت پر توقف کیا اور آپ کو مہدی اور قائم قرار دیا اور واقفیہ کہلائے۔[51] مہدویت اور قائمیت کے تفکر کی جڑیں بنیادی شیعہ اصولوں میں پیوست ہیں اور اس کا سرچشمہ خاندان رسالت سے منقولہ احادیث کی ہیں جن کی بنا پر خاندان رسالت کا ایک فرد "قائم" اور "مہدی" کے عنوان سے قیام کر کے دنیا کو عدل و انصاف کا گہوارہ بنائے گا۔

غالیوں کی سرگرمیاں

امام کاظم کے دور امامت میں غالیوں نے بھی اپنی سرگرمیاں جاری رکھیں۔اس دور میں فرقہ بشیریہ بنا جو محمد بن بشیر سے منسوب تھا اور یہ شخص امام موسی بن جعفر کے اصحاب میں تھا۔ وہ امام کی زندگی میں امام پر جھوٹ و افترا پردازی کرتا تھا ۔ [52] امام کاظم محمد بن بشیر کو نجس سمجھتے اور اس پر لعنت کرتے تھے.[53]

شیعہ تحریکیں

بنو عباس کے خلاف اٹھنے والی تحریکوں میں ایک شہید فخّ کے عنوان سے مشہور قیام حسین بن علی بن حسن بن حسن بن علی بن ابی طالب کا قیام ہے جن کی تحریک ناکام ہوئی؛ گوکہ اس قیام کا حکم امام(ع) نے نہيں دیا تھا لیکن آپ اس تحریک کی تشکیل سے باخبر تھے اور حسین بن علی کے ساتھ رابطے میں تھے۔ امام(ع) کی طرف سے جہاد میں استقامت کی تلقین اور حسین بن علی کی شہادت کی خبر دینا، اس بات کی دلیل ہے کہ امام(ع) اس قیام سے آگہی رکھتے تھے۔[54] دیگر علوی تحریکوں میں یحیی بن عبداللہ اور ادریس بن عبداللہ کی تحریکوں کی طرف اشارہ کیا جاسکتا ہے۔[55]

علمی خدمات

امام کاظم سے روایات، مناظرہ جات اور گفتگوئیں شیعہ کتب میں مذکور ہیں ۔ [56][57]

شیعہ منابع میں اکثر امام کاظم سے احادیث منقول ہوئی ہیں ۔جن میں سے اکثر تعداد کلامی چون توحید[58]، بدا[59] اور ایمان[60] نیز اخلاق کے عنوان سے منقول ہیں ۔ [61] اسی طرح جوشن صغیر جیسی مناجات اسی امام سے مذکور ہیں ۔ان سے منقول روایات کی اسناد میں الکاظم، ابی‌الحسن، ابی‌الحسن الاول، ابی‌الحسن الماضی، العالم[62] و العبد الصالح سے امام کو یاد کیا گیا ہے ۔ عزیزالله عطاردی نے ۳،۱۳۴ احادیث امام کاظم سے اکٹھی کی ہیں جنہیں مُسْنَدُ الامام الکاظم کے نام سے اکٹھا کیا گیا ہے [63] اہل سنت عالم دین ابوعمران مروزی نے مسند امام موسی کاظم کے عنوان سے بعض احادیث ذکر کی ہیں ۔ [64]

    عقل کے بارے میں امام سے منسوب ایک رسالہ لکھا گیا جس میں ہشام بن حکم کو خطاب کیا گیا ہے ۔[65][66]

    فتح بن عبدالله کے سولات کے جواب میں ایک رسالہ توحید کے نام سے امام کے حوالے سے مذکور ہے ۔ [67][68]

    علی بن یقطین نے بھی امام موسی بن جعفر سے مسائل دریافت کئے جو مسائل عن ابی الحسن موسی بن جعفر‌ کی صورت میں انہوں نے لکھے

مناظرے اور گفتگوئیں

امام کاظم کے مناظرات اور گفتگوئیں مختلف کتب میں مذکور ہوئی ہیں جن میں سے بعض خلفائے بنی عباس ،[71] یہودی دانشمندوں ، [72] مسیحیوں، [73] ابوحنیفہ [74] اور دیگران سے منقول ہیں ۔ باقر شریف قرشی نے تقریبا آٹھ مناظرے اور گفتگوئیں مناظرے کے عنوان کے تحت ذکر کی ہیں ۔[75] امام کاظم (ع) نے مہدی عباسی کے ساتھ فدک اور قرآن میں حرمت خمر کے متعلق گفتگو کی . [76] امام (ع) نے ہارون عباسی سے مناظرہ کیا ۔جب کہ وہ اپنے آپکو پیامبر(ص) سے منسوب کر کے اپنے آپ کو پیغمبر کا رشتہ دار سمجھتا تھا ، امام کاظم(ع) نے اسکے سامنے اسکی نسبت اپنی رشتہ داری کو رسول اکرم سے زیادہ نزدیک ہونے کو بیان کیا۔[77] موسی بن جعفر نے دیگر ادیان کے علما سے بھی مناظرے کئے جو عام طور پر سوال و جواب کی صورت میں تھے جن کے نتیجے میں وہ علما مسلمان ہو گئے ۔ [78]

ابو حنیفہ

روایت کے مطابق ابوحنیفہ نے کسی مسئلے کے استفسار کی خاطر امام صادق(ع) سے ملاقات کی ۔لیکن امام صادق(ع) سے پہلے اسکی نظر امام موسی کاظم پر پڑی جنکا سن 5سال تھا تو اس نے ان سے سوال کیا۔: گناہ خدا سے صادر ہوتا ہے یا بندے سے ؟ امام کاظم(ع) نے جواب میں کہا:گناہ یا تو خدا کی طرف سے صادر ہوتا ہے اور اس میں بندے کی کسی قسم کی کوئی دخالت نہیں ہے پس اس صورت میں بندے کی جانب سے اس میں کسی قسم کی دخالت نہ ہونے کی بنا پر خدا اسے مجازات نہیں کرے گا ۔ یا اس گناہ میں خدا اور بنده دونوں شریک ہیں ۔ اس صورت میں خدا انسان کی نسبت قوی تر ہے اور قوی کی موجودگی میں قوی کو حق حاصل نہیں کہ صرف اپنے ضعیف شریک کو سزا دے ۔ یا گناہ بندے کی جانب سے اور خدا کا اس میں کسی قسم کا دخل نہیں ہے ۔اس صورت میں اگر خدا چاہے تو اسے سزا دے یا اسے بخش دے ۔خدا وہ ذات ہے جس سے ہر حال میں مدد لی جاتی ہے ۔ ابوحنیفہ نے یہ جواب سن کر کہا میرے لئے یہ جواب کافی ہے اور امام صادق کے گھر سے چلا گیا ۔ [79]

بریہہ

شیخ صدوق اور دیگروں کی ہشام بن حکم سے منقول روایت کے مطابق مسیحی علما میں سے بریہہ ایک گروہ کے ہمراہ ہشام کے پاس آیا اور اس نے مناظرہ کیا ۔ ہشام نے کامیابی حاصل کی .پھر وہ سب امام صادق سے ملاقات کرنے کیلئے عراق سے مدینہ آئے۔ امام صادق کے گھر داخل ہوتے ہوئے ان کی ملاقات امام موسی کاظم سے ہوئی ۔بعض روایات کے مطابق ہشام نے امام موسی کاظم سے واقعہ بیان کیا اور ان عیسائیوں کی امام سے گفتگو ہوئی کہ جس کے بعد بریہہ اور اسکی بیوی مسلمان ہو کر امام کے خدمتکار ہوگئے [80]۔ ہشام نے ان کی بات چیت اور مسلمان ہونے کا واقعہ امام صادق کے سامنے بیان کیا تو امام صادق نے یہ آیت تلاوت فرمائی: ذُرِّیَّهً بَعْضُها مِن بَعْضٍ وَاللهُ سَمیِعُ عَلیِمُترجمہ:جو ایک نسل ہے جن کے بعض بعض سے ہیں (یہ اولاد ہے ایک دوسرے کی) اور خدا بڑا سننے والا، بڑا جاننے والا ہے۔ (34)۔ [81]

ہارون عباسی

ہارون پیامبر کی قبر کے پاس آیا اور حاضرین کے سامنے رسولخدا ؐ سے اپنی رشتہ داری ظاہر کرنے کی خاطر میرے چچا کے بیٹے کہہ کر رسول اللہ کو خطاب کیا۔ امام کاظمؑ وہاں موجود تھے آپ نے میرے باپ کہہ کر رسول خدا کو خطاب کیا [82]۔ ایک روایت کی بنا پر ہارون نے امام سے کہا: لوگوں کو کیوں اس بات کی اجازت دیتے ہو کہ وہ تمہیں پیغمبر کی طرف نسبت دیں یا تم تو رسول اللہ کے بیٹوں میں سے نہیں بلکہ علی کے فرزندوں میں سے ہو ؟ امام نے اسے جواب دیا : اے خلیفہ! اگر پیغمبر زندہ ہو جائیں اور تم سے تمہاری بیٹی کا رشتہ طلب کریں تو تم انہیں رشتہ دو گے ؟ ہارون نے جواب دیا : کیوں نہیں بلکہ میں عرب پر اس بات کی وجہ سے فخر ومباہات کروں گا ۔ امام کاظم نے جواب دیا : لیکن پیغمبر کسی بھی حالت میں مجھ سے میری بیٹی کا رشتہ نہیں مانگیں گے کیونکہ وہ میرے نانا ہیں ۔ [83]

سیرت

امام موسی کاظم کی خدا سے ارتباط ، لوگوں اور حاکمان وقت کے روبرو ہونے کی روشیں مختلف تھیں۔خدا سے ارتباط کی روش کو سیرت عبادی ، حاکمان وقت اور لوگوں سے ارتباط کی روش کو سیاسی اور اخلاقی روش سے تعبیر کیا گیا ہے ۔

عبادی سیرت

شیعہ و سنی منابع کے مطابق امام کاظم (ع)بہت زیادہ اہل عبادت تھے ۔اسی وجہ سے انکے لئے عبد صالح استعمال کیا جاتا ہے ۔[84]بعض روایات کی بنا پر حضرت امام موسی کاظم اس قدر زیادہ عبادت کرتے تھے کہ زندانوں کے نگہبان بھی اس کے تحت تاثیر آجاتے ۔[85] شیخ مفید موسی بن جعفر کو اپنے زمانے کے عابد ترین افرادمیں سے شمار کرتے ہیں ۔ان کے بقول گریہ کی کثرت کی وجہ سے آپ کی ریش تر ہو جاتی ۔ وہ عَظُمَ الذَّنْبُ مِنْ عَبْدِكَ فَلْيَحْسُنِ الْعَفْوُ مِنْ عِنْدِكَ کی دعا بہت زیادہ تکرار کرتے تھے۔اللَّهُمَّ إِنِّي أَسْأَلُكَ الرَّاحَةَ عِنْدَ الْمَوْتِ وَ الْعَفْوَ عِنْدَ الْحِسَابِ کی دعا سجدے میں تکرار کرتے ۔[86] یہانتک کہ ہارون کے حکم سے جب زندان تبدیل کیا جاتا تو اس پر خدا کا شکر بجا لاتے کہ خدا کی عبادت کیلئے پہلے سے زیادہ فرصت مہیا کی ہے اور کہتے : خدایا ! میں تجھ سے عبادت کی فرصت کی دعا کرتا تھا تو تو نے مجھے اسکی فرصت نصیب فرمائی پس میں تیرا شکر گزار ہوں ۔[87]

اخلاقی سیرت

مختلف شیعہ اور سنی منابع میں امام موسی کاظم کی بردباری[88] اور سخاوت کا تذکرہ موجود ہے ۔[89] شیخ مفید نے انہیں اپنے زمانے کے ان سخی ترین افراد میں سے شمار کیا ہے کہ جو فقیروں کیلئے خود خوراک لے کر جاتے تھے[90]. ابن عنبہ نے امام موسی کاظم کی سخاوت کے متعلق کہا ہے :وہ رات کو اپنے ہمراہ درہموں کا تھیلا گھر سے باہر لے جاتے ہر کسی کو اس میں سے بخشتے یا جو اس بات کے منتظر ہوتے تو انہیں بخشتے ۔اس بخشش کا سلسلہ یہانتک جاری رہا کہ زمانے میں ان کے درہموں کا تھیلا ایک ضرب المثل بن گیا تھا ۔ [91] اسی طرح کہا گیا ہے کہ موسی بن جعفر ان لوگوں کو بھی بخشش سے محروم نہیں رکھتے تھے جو انہیں اذیت دیتے تھے ۔جب انہیں خبر دی جاتی کہ فلاں انہیں تکلیف و آذار پہچانا چاہتا ہے تو اسکے لئے ہدیہ بھجواتے ۔[92] اسی طرح شیخ مفید نے امام موسی کاظم کو اپنے گھر اور دوسرے رشتہ داروں کے ساتھ صلۂ رحمی کی سب سے زیادہ سعی کرنے والا سمجھتے ہیں ۔ [93]

امام موسی کاظم کو کاظم کا لقب دینے کی وجہ یہ تھی کہ آپ اپنے غصے کو کنٹرول کرتے تھے ۔[94] مختلف روایات میں آیا ہے کہ آپ دشمنوں اور اپنے ساتھ بدی کرنے والوں کے مقابلے میں اپنا غصہ پی جاتے تھے ۔[95] کہا گیا ہے کہ عمر بن خطاب کی اولاد میں سے کسی نے آپ کے سامنے حضرت علی کی توہین کی تو آپ کے ساتھیوں نے اس پر حملہ کرنا چاہا لیکن امام نے انہیں اس سے روک دیا پھر اس کے کھیت میں اسکے پاس گئے.اس شخص نے آپ کو دیکھتے ہی شور مچانا شروع کر دیا کہ کہیں آپ اس کی فصل کو خراب نہ کر دیں ۔ امام اسکے قریب ہوئے اور خوش خلقی سے پوچھا کہ اس کھیت میں تم نے کس قدر خرچ کیا ہے ؟شخص نے جواب دیا : ۱۰۰ دینار!۔ پھر پوچھا  : اس سے کتنی مقدار فصل حاصل ہو گی ؟ شخص نے جواب دیا :غیب نہیں جانتا ہوں . امام کاظم نے سوال : کس قدر اندازے کی امید ہے؟ شخص نے جواب دیا: ۲۰۰ دینار! امام نے اسے ۳۰۰ دینار دیتے ہوئے کہا  : ۳۰۰ دینار تمہارے لئے ہے اور ابھی فصل تمہارے لئے باقی ہے ۔ پھر مسجد گئے . اس شخص نے اپنے آپ کو امام سے پہلے مسجد پہنچایا اور امام کو آتے ہوئے دیکھ کر اٹھ کھڑا ہوا اور اس آیت کی بلند آواز میں تلاوت کی : اللَّه أَعْلَمُ حَيْثُ يَجْعَلُ رِ‌سَالَتَهُ خدا بہتر جانتا ہے کہ اپنی رسالت کو کہاں قرار دے ۔ [ انعام–۱۲۴] [96]

بشر حافی نے مشائخ صوفیہ کا مرتبہ حاصل کرنے کے بعد آپ کے کلام اور اخلاق سے متاثر ہو کر توبہ کی ۔ [97]

سیاسی سیرت

بعض منابع کہتے ہیں کہ امام تعاون نہ کرنے اور مناظروں جیسے ذرائع کے ساتھ خلفائے بنی عباس کی حکومت کے ناجائز ہونے کو بیان کرتے اور اس حکومت کی نسبت لوگوں کے اعتماد کو کم کرنے کی کوشش کرتے [98]۔ درج ذیل مقامات کو نمونے کے طور پر ذکر کیا جاتا ہے :

عباسی خلفا جب اپنی حکومت کو مشروعیت بخشنے کی خاطر اپنی نسبت اور نسب رسول خدا سے جوڑتے اور یہ ظاہر کرتے کہ بنو عباس رسول خدا کے نزدیکی رشتہ داروں میں سے ہیں جیسا کہ امام اور ہارون کے درمیان ہونے والی گفتگو میں ہوا ،تو امام موسی کاظم آیت مباہلہ سمیت قرآنی آیاتسے استناد کرتے ہوئے حضرت فاطمہ کے ذریعے اپنے نسب کو رسول خدا سے ملا کر ثابت کرتے ہیں ۔[99]

    جب مہدی عباسی رد مظالم کر رہا تھا تو آپ نے اس سے فدک کا مطالبہ کیا [100] . مہدی نے آپ سے تقاضا کیا کہ آپ فدک کے حدود معین کریں تو امام نے اسکے ایسے حدود معین کیے کہ جو انکی حکومت کے برابر تھے[101] ۔

ساتویں امام اپنے اصحاب کو عباسی حکومت سے تعاون نہ کرنے کی سفارش کرتے چنانچہ آپ نے صفوان جمال کو منع کیا کہ وہ اپنے اونٹ ہارون کو کرائے پر مت دے[102] ۔ اسی دوران ہارون الرشید کی حکومت میں وزارت پر فائز علی بن یقطین کو عباسی حکومت میں باقی رہنے کا کہا تا کہ وہ شیعوں کی خدمت کر سکے[103] ۔

 اسکے باوجود تاریخی مستندان میں حضرت امام موسی کاظم کی طرف سے عباسی حکومت کی کھلم کھلا مخالفت کی کوئی خبر مذکور نہیں ہوئی ہے .آپ اہل تقیہ تھے اور اپنے شیعوں کو اسی کی وصیت کرتے ٍ جیسا کہ آپ نے مہدی عباسی کو اسکی ماں کی وفات پر تسلیت کا خط لکھا[104] ۔ روایت کے مطابق جب ہارون نے آپ کو طلب کیا تو آپ نے فرمایا :حاکم کے سامنے تقیہ واجب ہے لہذا میں اسکے سامنے جا رہاہوں ۔اسی طرح آپ آل ابی طالب کی شادیوں اور نسل کو بچانے کی خاطر ہارون کے ہدایاجات قبول کرتے[105]۔ یہانتک کہ آپ نے علی بن یقطین کو خط لکھا کہ خطرے سے بچاؤ کی خاطر کچھ عرصہ کیلئے اہل سنت کے مطابق وضو کیا کرے [106]۔

علویوں کے قیام

حضرت موسی بن جعفر کے زمانے میں عباسیوں کی حکومت کے دوران علویوں نے نے متعدد قیام کئے ۔عباسیوں نے اہل بیت کی حمایت اور طرفداری کا نعرہ بلند کر کے قدرت حاصل کی تھی لیکن کچھ ہی مدت میں علویوں کے سخت دشمن بن گئے ۔لہذا اس بنا پر بہت سے علویوں کو قتل کیا اور بہت سوں کو زندانی کیا[107] ۔ عباسیوں کی اس سخت گیری کی وجہ سے بہت سے علویوں نے انکے خلاف قیام کا اقدام کیا ۔قیام نفس زکیہ ،ادریسیوں کی حکومت کی تشکیل اور شہید فخ کا قیام انہی قیاموں میں سے ہیں ۔ قیام فخ سال ۱۶۹ق ہجری میں موسی بن جعفر کی امامت اور ہادی عباسی کی خلافت سے متصل ہے[108] ۔ امام نے ان قیاموں کا حصہ نہیں بنے اور نہ ہی امام کی جانب سے ان قیاموں کی واضح طور پر کہیں تائید نقل ہوئی ہے ۔یہانتک کہ یحیی بن عبدالله نے طبرستان میں قیام کے بعد امام کو ایک خط میں اسکی تائید نہ کرنے کا گلہ کیا[109] ۔

    قیام فخ مدینہ میں رونما ہوا ،اسکے متعلق دو نظریے پائے جاتے ہیں :

 ایک جماعت اس بات کی قائل ہے کہ آپ اس قیام کے موافق تھے ۔اس نظریے کی تائید میں شہید فخ کے بارے میں امام کے اس خطاب کو دلیل کے طور پر ذکر کیا جاتا ہے : اپنے کام میں سنجیدگی کا مظاہرہ کرو کیونکہ لوگ ایمان کا اظہار کر رہے ہیں لیکن وہ اندرونی پر شرک کر رہے ہیں۔[110]

 دوسرا گروہ اس بات کا قائل ہے کہ یہ قیام امام کا مورد تائید نہیں تھا[111]۔

بہر حال جب امام نے شہید فخ کا سر دیکھا تو کلمہ استرجاع کی تلاوت کی اور اس کی تعریف کی [112]۔ ہادی عباسی قیام فخ کو امام کے حکم سے سمجھتا تھا اسی وجہ سے ہادی نے امام کو قتل کرنے دھمکی بھی دی تھی۔[113]

وکیل اور اصحاب

امام موسی کاظم کے اصحاب کی مشخص تعداد معلوم نہیں ہے ۔ان کی تعداد میں اختلاف نظر پایا جاتا ہے :

        شیخ طوسی ان اصحاب کی تعداد ۲۷۲ ذکر کی ہے.[114]

        برقی نے انکی تعداد ۱۶۰ افراد شمار کی ہے .

        قرشی برقی کی تعداد: ۱۶۰ کو درست نہیں سمجھتے ہیں اور انہوں نے خود[115] ۳ افراد ذکر کی ہے ۔

علی بن یقطین ہشام بن حکم، ہشام بن سالم، محمد بن ابی‌عمیر، حماد بن عیسی، یونس بن عبدالرحمن ، صفوان بن یحیی و صفوان جمال امام کاظم کے ان اصحاب میں سے ہیں کہ جنہیں بعض نے اصحاب اجماع میں شمار کیا[116] ۔ امام کی شہادت کے بعد بعض اصحاب جیسے علی بن ابی حمزه بطائنی ، زیاد بن مروان اور عثمان بن عیسی نے علی بن موسی الرضا (ع) کی امامت کو قبول نہیں کیا اور امام موسی کاظم کی امامت پر توقف کیا [117]۔ یہ گروہ واقفیہ کے نام سے معروف ہوا ۔ البتہ ان میں سے بعض نے دوبارہ امام علی بن موسی رضا کی امامت کو قبول کر لیا ۔

وکالت

شعبہ وکالت

امام کاظم نے اپنے زمانے میں شیعوں کے باہمی رابطے اور انکی اقتصادی توان بڑھانے کی خاطر امام جعفر صادق کے زمانے میں قائم ہونے والے وکالت کے شعبے کو وسعت دی ۔ امام موسی کاظم نے کچھ اصحاب کو مختلف جگہوں پر وکیل کے عنوان سے بھیجا۔ کہا گیا ہے کہ منابع میں ۱۳ افراد کے نام وکیل کے طور پر ذکر ہوئے ہیں [118]۔ بعض منابع کے مطابق کوفہ میں علی بن یقطین اور مفضل بن عمر ،بغداد میں عبدالرحمان بن حجاج، قندھار میں زیاد بن مروان، مصر میں عثمان بن عیسی، نیشاپور میں ابراہیم بن سلام اور اہواز میں عبدالله بن جندب امام کی جانب سے وکیل تھے [119]۔ مختلف روایات کے مطابق شیعہ حضرات اپنا خمس وکلا کے ذریعے امام موسی کاظم تک پہنچاتے یا خود امام کو دیتے ۔ شیخ طوسی نے کچھ وکلا کے واقفی ہونے کا سبب ذکر کرتے ہوئے کہا ہے کہ وہ لوگ اپنے پاس جمع شدہ مال کی محبت میں واقفی ہو گئے[120]۔ علی بن اسماعیل بن جعفر نے ہارون عباسی کو ایک خبر دی جس کی وجہ سے امام موسی کاظم کو زندان جانا پڑا،اس خبر میں آیا ہے کہ اسے شرق و غرب سے بہت زیادہ مال بھجوایا گیا ،وہ بیت المال اور خزانے کا صاحب تھا کہ جس میں مختلف حجم کے بہت زیادہ سکے پائے گئے[121]۔

شیعوں کے ساتھ ارتباط کی ایک روش خطوط کی تھی کہ جو انہیں فقہی ،اعتقادی، وعظ،دعا اور وکلا سے مربوط مسائل کے سلسلے میں لکھے جاتے تھے ۔ یہانتک نقل ہوا کہ آپ زندان سے اپنے اصحاب کو خطوط لکھتے[122] اورانکے سوالوں کے جواب دیتے تھے۔[123]

اہل سنت کے نزدیک امام کی منزلت

اہل سنت شیعوں کے اس ساتویں امام کا ایک عالم دین کی حیثیت سے احترام کرتے ہیں ۔ان کے بعض جید علما نے ان کے علم و اخلاق کی تعریف کی[124] نیز انہوں نے انکی بردباری، سخاوت، کثرت عبادت اور دیگر اخلاقی خصوصیات کی طرف اشارہ کیا ہے [125]۔ اسی طرح انکی بردباری اور عبادت کی روایات انہوں نے نقل کی ہیں[126]۔ اہل سنت کے سمعانی جیسے جید علما آپ کی قبر کی زیارت کیلئے جاتے تھے [127]۔ اور ان سے توسل کرتے تھے .علمائے اہل سنت میں سے ابوعلی خلال نے کہا :جب بھی اسے کوئی مشکل پیش آتی وہ آپ کی قبر کی زیارت کیلئے جاتا اور ان سے توسل کرتا یہانتک کہ اس کی مشکل برطرف ہو جاتی[128]۔ شافعی نے امام کو شفا بخش دارو کہا ہے۔[129] ۔

مقبرہ

حرم کاظمین

بغداد کے پاس کاظمین میں امام کاظم(ع) اور امام جواد(ع) کے مقبرے حرم کاظمین کے نام سے مشہور ہیں ۔ مسلمانوں اور خاص طور شیعوں کیلئے زیارگاہ کی حیثیت رکھتے ہیں ۔امام رضا(ع) سے منقول روایت کے مطابق امام موسی کاظم کی زیارت کا ثواب رسول اللہ، حضرت علی(ع) اور امام حسین(ع) کی زیارت کے برابر ہے[130] .

کتابشناسی

امام کاظم کے متعلق مختلف زبانوں میں کتابیں، تھیسس اور مقالے لکھے گئے۔ جن کی تعداد ۷۷۰ کے قریب ہے[131]۔کتاب‌ ہای کتابنامہ امام کاظم [132] ، کتاب‌شناسئ کاظمین[133] اور مقالۂ کتاب‌شناسی امام کاظم[134] میں ان آثار کی معرفی کی گئی ہے ۔ اسی طرح فروری 2014 میلادی میں امام کاظم کا زمانہ اور سیرت کے عنوان سے ایک کانفرنس ایران میں برگزار ہوئی جس کے مقالوں کا مجموعہ بعنوان مجموعہ مقالات ہمایش سیره امام کاظم منتشر ہوا [135].

اسی طرح مسند الامام الکاظم، باب الحوائج الامام موسی الکاظم اور حیاة الامام موسی بن جعفر ان آثار میں سے ہیں جن میں امام کاظم علیہ السلام کی زندگی کے بارے میں لکھاگیا ۔